English   /   Kannada   /   Nawayathi

حماس نے ایک بار پھر اسرائیل کو کیا خبردار

share with us

اسلامی تحریک مزاحمت ’حماس‘ کے سیاسی بیورو کے سربراہ اسماعیل ہانیہ نے خبردار کیا ہے کہ غزہ میں اسرائیلی فوجی کارروائیوں سے جنگ بندی کے مذاکرات دوبارہ صفر کی سطح پر آسکتے ہیں۔ انہوں نے ثالث ممالک مصر اور قطر کی قیادت سے فون پر جنگ بندی کیلئے کی جانے والی کوششوں اور غزہ میں اسرائیلی جنگی جرائم پر بات کی۔ انہوں نے کہا کہ حماس نے جنگ بندی معاہدے کے لیے ہرممکن لچک دکھائی مگر صہیونی دشمن ریاست اور اس کا سربراہ نتن یاہو اپنی ہٹ دھرمی اور فلسطینیوں کی نسل کشی کی مجرمانہ پالیسی پر قائم ہے۔ حماس نے ٹیلی گرام پر پوسٹ کردہ ایک بیان میں کہا کہ ہانیہ نے ثالث ممالک کی قیادت کے ساتھ فون پر بات کی جس میں انہوں نے اسرائیلی وزیر اعظم نیتن یاہو اور ان کی فوج کو مذاکرات کے ممکنہ خاتمے کے لئے مکمل طور پر ذمہ دار ٹھہرایا۔ بیان میں کہا گیا ہے کہ غزہ بالخصوص رفح میں انسانی المیہ ایک خطرناک شکل اختیار کرسکتا ہے۔ حماس نے مزید کہا کہ نتن یاہو غزہ میں جنگ کے خاتمے کے لئے ایک معاہدے تک پہنچنے کی خاطر ہونے والے مذاکرات کے درمیان جنگ بندی کے مذاکرات میں رکاوٹیں ڈال رہے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ حماس ایک طرف لچک دکھارہی ہے مگر دوسری طرف صہیونی دشمن فلسطینیوں کی نسل کشی، جبری نقل مکانی، ان کے قتل عام اور ان کی تذلیل کی پالیسی پر عمل پیرا ہے۔ دشمن نے حماس کی جنگ بندی کے لیے دکھائی جانے والی ہر لچک کا منفی جواب دیا۔ بیان میں کہا گیا ہے کہ حماس نے ثالث ممالک سے نتن یاہو کی چالوں اور جرائم کو روکنے کے لیے مداخلت کرنے کا مطالبہ کیا۔ اسماعیل ہانیہ نے کہا کہ صہیونی قابض فوج نے غزہ شہر کے آس پاس کے علاقوں کے خلاف اپنی جارحیت میں اضافہ کرتے ہوئے دسیوں ہزار شہریوں کو نشانہ بنایا اور انہیں وحشیانہ بمباری کے بوجھ تلے اپنے گھروں سے بھاگنے پر مجبور کیا۔ یہ غزہ میں ہمارے فلسطینی عوام کے خلاف۹؍ ماہ سے زائد عرصے سے جاری تباہی کی جنگ کا تسلسل ہے۔ فاشسٹ قابض حکومت تمام بین الاقوامی قوانین اور معاہدوں کی خلاف ورزی کرتی ہے۔ 

Prayer Timings

Fajr فجر
Dhuhr الظهر
Asr عصر
Maghrib مغرب
Isha عشا