English   /   Kannada   /   Nawayathi

غزہ کے تعلق سے اقوامِ متحدہ کا بڑا بیان : بے گھر ہوچکے ہیں 90 فیصد لوگ

share with us

09؍جولائی 2024 : اقوام متحدہ نے کہا ہے کہ غزہ کے 90 فیصد لوگ اپنے گھروں سے بے گھر ہو چکے ہیں اور بعض افراد تو کئی مرتبہ بے گھر ہو چکے ہیں۔ اقوام متحدہ کے دفتر نے پیر کو کہا کہ اسرائیلی فوج نے اتوار اور پیر کو غزہ کے 19 بلاکس میں رہنے والے ہزاروں لوگوں کو فوری طور پر انخلاء کی ہدایت کی ہے۔

رپورٹ کے مطابق، اتوار کے روز مغربی غزہ شہر میں کچھ لوگوں کو انخلا کا حکم دیا گیا، جب کہ پیر کو دیر البلاح کیمپ کو خالی کرنے کی ہدایات دی گئیں۔

اس نے کہا، ’’براہ راست متاثر ہونے والے دو علاقوں میں صحت کی 13 سہولیات شامل ہیں جو حال ہی میں شروع کی گئی ہیں، جن میں دو ہسپتال، دو بنیادی صحت کے مراکز اور نو طبی مراکز شامل ہیں۔‘‘ غزہ کی پٹی میں 36 میں سے 13 ہسپتال صرف جزوی طور پر کام کر رہے ہیں۔

اندازہ لگایا گیا ہے کہ غزہ میں ہر 10 میں سے 9 افراد کے بے گھر ہو گئے ہیں۔ دفتر نے کہا کہ نقل مکانی کی نئی لہریں بنیادی طور پر ایسے لوگوں کو متاثر کرتی ہیں جو پہلے بھی کئی بار بے گھر ہو چکے ہیں لیکن دوبارہ نقل مکانی پر مجبور ہو گئے ہیں۔ وہ بار بار اپنی زندگی شروع کرنے پر مجبور ہیں۔

غزہ کے لوگ بالخصوص بچے پانی جمع کرنے کے لیے روزانہ گھنٹوں قطاروں میں کھڑے رہتے ہیں۔ ہنگامی صحت کی دیکھ بھال تک رسائی بھی ایک بڑا چیلنج ہے۔

شمالی غزہ میں 80000 اندرونی طور پر بے گھر افراد کے لیے کوئی کیمپ نہیں ہے جو جون کے آخر میں پہنچنے پر مجبور ہوئے تھے۔ بہت سے لوگ ٹھوس کچرے اور ملبے کے درمیان بغیر گدے یا کپڑوں کے سوتے ہوئے پائے گئے اور کچھ نے جزوی طور پر تباہ شدہ اقوام متحدہ کی تنصیبات اور رہائشی عمارتوں میں پناہ لی تھی۔

اقوام متحدہ کے دفتر برائے انسانی امور نے کہا کہ اسرائیلی فورسز نے ان علاقوں کو انخلاء کے علاقوں کے طور پر نامزد کیا ہے، جس کی وجہ سے گزشتہ دو ہفتوں کے دوران چھوٹے بچوں اور بوڑھوں سمیت کئی خاندانوں کی نقل مکانی کی لہریں سے گزرنا پڑا۔ انسانی کاموں کو برقرار رکھنے کے لیے درکار ایندھن اور دیگر سامان کی شدید قلت ہے، نیز گرمی کی وجہ سے رسد (خاص طور پر خوراک) کے خراب ہونے اور انفیکشن کا خطرہ بڑھ گیا ہے۔‘

غزہ میں 18 بیکریوں میں سے صرف سات کام کر رہی ہیں، جو تمام دیر البلاح میں ہیں اور 6 بیکریاں جو پہلے سے ہی جزوی طور پر کام کر رہی تھیں، اب ایندھن کی قلت کی وجہ سے مکمل طور پر بند ہو گئی ہیں۔ فتر نے کہا کہ کھانا پکانے کی گیس اور کھانے پینے کی اشیاء کی کمی کی وجہ سے کمیونٹی کچن بھی چلانے میں مشکلات کا سامنا ہے۔ یہاں پکا کھانا ملنا مشکل ہو گیا ہے۔

بے گھر خاندان کھانا پکانے کے لیے فرنیچر اور کچرے سے لکڑی اور پلاسٹک جلانے پر مجبور ہیں، جس سے صحت اور ماحولیاتی خطرات میں اضافہ ہو رہا ہے۔

جہاں تک کھانا پکانے کا تعلق ہے، انسانی ہمدردی کی ایجنسی نے کہا کہ وہ گندم کا آٹا اور ڈبہ بند کھانا تقسیم کر رہے ہیں لیکن اب ایریز ویسٹ کراسنگ کی بندش کی وجہ سے اس میں رکاوٹ پیدا ہو رہی ہے۔

اقوام متحدہ کے فوڈ اینڈ ایگریکلچر آرگنائزیشن اور اقوام متحدہ کے سیٹلائٹ سینٹر کے مشترکہ جائزے میں اندازہ لگایا گیا ہے کہ غزہ کی تقریباً 57 فیصد زرعی زمین اور اس کے ایک تہائی گرین ہاؤسز کو نقصان پہنچا ہے۔

مقامی مارکیٹ میں گوشت اور مرغی جیسی اشیائے خوردونوش کی بھی شدید قلت ہے، جہاں پر مقامی طور پر تیار کی جانے والی چند سبزیاں ہی مناسب قیمت پر دستیاب ہیں۔

Prayer Timings

Fajr فجر
Dhuhr الظهر
Asr عصر
Maghrib مغرب
Isha عشا