English   /   Kannada   /   Nawayathi

بہار میں الیکشن:سوچ سمجھ کر فیصلہ کرنے کا وقت!!

share with us
BIHAR ELECTION


  تحریر: جاوید اختر بھارتی

جمہوری ملک میں ووٹ دینابھی بہت بڑا حق ہے اور ووٹ مانگنا بھی بہت بڑا حق ہوتا ہے اس سے اپنے مستقبل کو سنوارا جاسکتا ہے اپنی بات منوائی جاسکتی ہے  اور اپنے حقوق کے تحفظ کیلئے راستہ ہموار کیا جاسکتا ہے حکومت میں اپنی حصہ داری درج کرائی جاسکتی ہے، اپنے سماج کے مستقبل کو روشن کیا جاسکتا ہے، اپنے مسائل کو حل کیا اور کرایا جاسکتا ہے یہ بات ہمیشہ ذہن میں رکھنا چاہیے کہ سیاست ماسٹر چابی ہوا کرتی ہے سیاسی شعور اور سیاسی بیداری سے دنیا کا ہر تالا کھولا جاسکتا ہے یہ تو خوش نصیبی کی بات ہے کہ ہمارا ملک ہندوستان دنیا کی سب سے بڑی جمہوریت ہے یہ الگ بات ہے کہ کوئی اس کی اہمیت اور فوائد کو سمجھے اور کوئی نہ سمجھے جس نے سمجھا وہ اقتدار کی دہلیز تک پہنچا اور اقتدار کا مزہ تک چکھا اور اپنے سماج کو بھی سیاسی طور پر خوب مضبوط کیا اور جس نے سیاست و جمہوریت کے فوائد و اہمیت کو نہیں سمجھا وہ صرف یہی جانتا ہے کہ ووٹ کے معنی بیلیٹ پیپر پر مہر لگا دینا یا امید وار کے چناؤ نشان کے سامنے والی بٹن دبا دینا اور ایسے ہی لوگ رونا روتے پھرتے ہیں کہ ہمارا کوئی رہبر نہیں، ہمارا کوئی لیڈر نہیں کم از کم تھوڑا سا ذہن پر زور ڈالیں تو یہ بات سمجھ میں آئے گی کہ ہم پہلے ووٹر فہرست میں اپنا نام تلاش کرتے ہیں پھر ایک پرچی حاصل کرتے ہیں اس کے بعد قطار میں کھڑے ہوتے ہیں اس کے بعد ہم دستخط کرتے ہیں تب ہمیں بیلیٹ پیپر ملتا ہے یا بٹن دبانے کے لیے کہا جاتا ہے گویا اب ہم نے جس نشان پر مہر لگائی یا بٹن دبائی تو ہم نے یہ تسلیم کیا کہ آپ ہمارے نمائندہ ہیں، آپ ہمارے مسائل کو حل کرائیں گے ، آپ سے ہمیں صرف امید نہیں بلکہ یقین ہے کہ آپ ضرور ہماری آواز میں آواز ملائیں گے، آپ ہمارے اور ہم آپ کے شانہ بشانہ کھڑے رہیں گے اور قدم سے قدم ملا کر چلیں گے آپ کی نمائندگی کو ہم نے تحریری طور پر منظور کیا ہے،، اب سوال یہ پیدا ہوتا ہے کہ ہمیں اس بات کا شعور، احساس اور پہچان تو ہونی چاہیے کہ کون کتنا ہمارا ساتھ دے گا اور کون کتنا ہمارے دکھ سکھ میں شریک ہوگا ایک جمہوری ملک میں اگر 70 سال میں اتنا بھی شعور نہ آئے تو یہ بدنصیبی ہی کہی جائے گی اور ایسا شخص، ایسا طبقہ، ایسا سماج یقیناً جذباتی نعروں میں بہہ جائے گا اور جذباتی باتوں کا شکار ہو جائے گا اور ایسے سماج و طبقے کو ہر سیاسی پارٹی اور ہر سیاسی لیڈر بڑی آسانی کے ساتھ سکوں کے طور پر بھنا لے گا نتیجہ یہ ہوگا کہ مزدوروں کا مسئلہ حل نہیں ہوگا، کمزوروں کا حق مارا جائے گا اور ابتک یہی ہوا ہے،، اس لیے اب سوچ تبدیل کرنے کی ضرورت ہے سیاسی طور پر بیدار ہونے کی ضرورت اور روز بروز کی مصیبت اور مسائل سے چھٹکارا حاصل کرنے کی ضرورت ہے اور یہ سب کچھ سیاسی شعور سے ہی ممکن ہے -
اور اتفاق سے یہ موقع بہار کی عوام کے لئے حاصل ہوا ہے یعنی بہار میں اسمبلی الیکشن ہونے والا ہے تو بہار کے لوگوں کو موجودہ حکومت سے بھی حساب کتاب مانگنا چاہیے اور ساتھ ہی ساتھ مزدوروں کا معاملہ بھی سامنے رکھنا چاہیے اس لیے کہ پورے ہندوستان میں جہاں درس و تدریس کے میدان میں بہار کے چہرے نظر آتے ہیں وہیں مزدوری کرتے ہوئے بھی پورے ملک میں بہار کے لوگ دیکھے جاتے ہیں اور انہیں کبھی علاقائیت کے نام پر تو کبھی مختلف معاملات کی بنیاد پر سخت ترین مشکلات کا سامنا کرنا پڑتا ہے اور بالخصوص مہاراشٹر و گجرات جیسی ریاستوں میں اکثر و بیشتر انہیں ظلم و ستم کا نشانہ بنایا جاتا ہے پھر بھی مزدوروں کے تحفظ کیلئے کوئی اقدامات نہیں کئے جاتے اب الیکشن آگیا تو ہر سیاسی پارٹیوں سے بہار کے غریب مزدوروں کو سوال کرنا چاہئے کہ آپ ہمارے لیے کیا کریں گے آخر جب ہم محنت مزدوری کرنے کے لیے دوسری ریاستوں میں جاتے ہیں اور ہمارے اوپر مصیبت کے پہاڑ توڑے جاتے ہیں تو وہ روزگار کے ذرائع خود بہار میں میسر کیوں نہیں کرائے جاتے، بہار میں مل فیکٹریاں کیوں نہیں لگائی جاتیں
تاکہ ہم بہار میں رہکر ہی محنت مزدوری کریں اور اپنے کنبے کی پرورش کریں اس سے ہماری جان بھی محفوظ رہے گی لہذا ضرورت اس بات کی ہے کہ بہار کی عوام کی طرف سے یہ نعرہ بلند ہو کہ ہمارا ووٹ اسی کو جو مزدوروں کے حق کی بات کرے اور بہار میں روزگار کے ذرائع فراہم کرائے اب فیصلہ بہار کی عوام کو کرنا ہے سیاسی پارٹیاں تو آئیں گی لیڈران تو آئیں گے، سبز باغ دکھائیں گے، وعدے پر وعدہ کریں گے اب بہار کے غریبوں، مزدوروں اور ووٹروں کی ذمہ داری ہے کہ پہلے نگاہ دوڑائیں کی پانچ سال قبل کیا گیا وعدہ کتنا پورا ہوا ہے اگر صرف وعدہ وعدہ ہی رہ گیا تو اس پارٹی اور اس لیڈر کا گریبان پکڑیں اور سوال کریں کہ ماضی میں کیا گیا وعدہ آخر کیوں پورا نہیں ہوا اور جب ماضی میں کیا ہوا وعدہ آپ نے پورا نہیں کیا تو پھر کس بنیاد پر دوبارہ وعدہ کرنے لگے -

مضمون نگار کی رائے سے ادارہ کا متفق ہوناضروری نہیں ہے 

 

Prayer Timings

Fajr فجر
Dhuhr الظهر
Asr عصر
Maghrib مغرب
Isha عشا