English   /   Kannada   /   Nawayathi

حضرت مولانا برھان الدین سنبھلی رحمۃ اللہ علیہ (استاد دارالعلوم ندوۃ العلماء لکھنو) کے سانحہ ارتحال پر جامعہ اسلامیہ بھٹکل میں تعزیتی جلسہ

share with us

چند دنوں قبل دارالعلوم ندوۃ العلماء لکھنو کے موقر استاد حضرت مولانا برھان الدین سنبھلی کا طویل علالت کے بعد انتقال ہوا، اسی مناسبت سے آج جامعہ اسلامیہ کی وسیع و عریض مسجد میں تعزیتی جلسہ کا انعقاد ہوا۔ جلسہ کا آغاز زبیر بہادر کی تلاوت سے ہوا، اس کے بعد مہتمم جامعہ مولانا مقبول صاحب کوبٹے ندوی نے مرحوم کے اوصاف حسنہ کا تذکرہ کرتے ہوئے جامعہ سے ان کے والہانہ تعلق کا اظہار کیا۔ اس کے بعد مولانا عبدالعظیم صاحب ندوی نے اپنے تاثرات میں فرمایا کہ ہم ان اولین بھٹکلی طلباء میں سے ہیں جنھیں مولانا کا شرف تلمذ حاصل رہا، نیز مرحوم سے پڑھی ہوئی کتابوں کا تذکرہ کرتے ہوئے ان سے حاصل شدہ فوائد کو بیان کیا، بعدہ مولانا عبدالرب صاحب ندوی نے اپنی یادوں کو تازہ کرتے ہوئے فرمایا کہ مرحوم مشکل سے مشکل سبق کو بھی آسانی سے سمجھاتے تھے اور طلبہ کے لیے کثیر استفادہ کا ذریعہ بنتے۔
مولانا فاروق صاحب قاضی ندوی نے مرحوم کے متعلق فرمایا کہ جب پہلی مرتبہ کلیۃ الشریعۃ کی نو رکنی کمیٹی تشکیل دی گئی تو ان میں مولانا بھی تھے۔ مولانا الیاس صاحب نے ان کی خصوصیات کو شمار کرتے ہوئے کہاکہ آپ کی زندگی کی کامیابی کا راز یہی ہے کہ آپ اپنے آپ کو ہمیشہ بڑوں کے تابع رکھتے تھے۔
مہمان خصوصی مولانا بلال عبدالحی حسنی ندوی صاحب fik_نائب ناظم ضیاء العلوم رائے بریلی و جنرل سکریٹری آل انڈیا پیام انسانیت فورم نے فرمایا کہ مولانا سراپا فیض تھے، مولانا کو اکابرین سے بڑا تعلق تھا، ان کی زندگی بڑی پاک و شفاف تھی، پاکیزہ دل تھے جن کی طرف دل کھنچتا تھا۔ آخر میں صدر جامعہ مولانا محمد اقبال صاحب ملا ندوی کی دعا پر جلسہ کا اختتام ہوا۔
اس موقع پر ذمہ داران جامعہ، اساتذہ و طلبہ کی کثیر تعداد شریک رہی اور مرحوم سے اپنے قلبی تعلق کا ثبوت دیتے ہوئے ان کے حق میں دعائے مغفرت کی۔
اللہ تعالیٰ مرحوم کی بال بال مغفرت فرمائے، پسماندگان کو صبر جمیل عطا فرمائے اور امت کو آپ کا نعم البدل عطا فرمائے۔ آمین

علاقات عامہ
جامعہ اسلامیہ بهٹکل

Prayer Timings

Fajr فجر
Dhuhr الظهر
Asr عصر
Maghrib مغرب
Isha عشا