ٹویٹر پر ہیش ٹیگ’’ مائی نیم ان اردو ‘‘کی دھوم ،جانئےکیا ہے وجہ ؟؟

share with us

نئی دہلی:09؍جنوری2019(فکروخبر/ذرائع)گزشتہ دنوں ٹوئٹر پر’مائی نیم ان اردو‘(MyNameInUrdu#) کی دھوم رہی۔ اس کی شروعات ٹوئٹر پر اردو میں اپنانام لکھنے سےہوئی لیکن اس کا مقصدمذہب کی بنیاد پر  نفرت اور تعصب کے خلاف  آواز اٹھاناتھا۔دراصل ایک خاتون پربھا راججن کو اردو نہیں آتی، انہیں اردو کا رسم الخط اچھا لگاتو انہوں نے شوقیہ ٹوئٹر پر اپنا نام اردو میں شیئر کیا۔

یہ تو بس آغاز تھا۔اس کے بعد انہیں موصول ہونے والے  معتددنفرت بھرے پیغامات  کی بھرمار ہو گئی۔ ان پیغامات کو پڑھ کر پربھا کو اندازہ ہوا کہ کئئ لوگ اردو   میں لکھے ان کے نام کی وجہ سے ان کو مسلمان سمجھ رہے تھے اور یہ نفرت در اصل  اس مذہبی شناخت کے لیےتھی۔

پربھا کو یہ سمجھ میں آیا کہ کئی لوگ نفرت میں اس قدر غرق ہیں کہ  ان کے لئے اس کا کھلا اظہاربھی  شرمندگی کا باعث نہیں ہے۔ لیکن وہ پیچھے ہٹنے والی نہیں تھیں۔ اس کے بعد ٹوئٹر پر ‘مائی نیم ان اردو،’ کی دھوم مچ گئی۔ انگنت لوگوں نے جن کو اردو نہیں آتی، انہوں نے گوگل  یا دوستوں کی مدد سے اپنا نام اردو میں لکھوا کر اپنے ہینڈل سے ٹوئٹ کرنا شروع کیا۔

ہر طرف یہی نظارہ تھا کہ لوگ اپنے دوستوں سے اردو میں اپنا نام لکھنے یا اس کو درست کرنے کی درخواست کر رہے تھے، تا کہ وہ فوری طور پر اسے اپنے اکاؤنٹ  میں لکھ سکیں۔

اکیلے ایک خاتون  جورنگ دے  ترنگا کے نام سے ٹوئٹ کرتی ہیں انہوں نے 300 لوگوں کے نام اردو رسم الخط  میں لکھ کر دیے۔

 اس مہم کی شروعات اس لیے ہوئی کہ پربھا کو سمجھ میں آیا کہ انسان کے نام  یا اس کی زبان سے  ہی اس کی مذہبی  شناخت کا اندازہ   لگانے  اور صرف اس  بنا پر نفرت   پھیلانے  کا رویہ کس حد تک رائج ہو  چکا ہے۔سپریم کورٹ میں وکالت کر رہے، انس جو بقراط کے نام سے ٹوئٹ کرنے ہیں انہوں نے لکھا، میں بہت پہلے سے یہ کہتا رہا ہوں کہ اردو مزاحمت کی زبان ہے اوریہی بدلاؤ کی زبان بنے گی۔  ان کا ماننا ہے  کہ ،اس زبان میں وہ ساری خوبیاں ہیں جو اسے بغاوت کی زبان بنائے۔

سوزین نے بھی اپنا نام اردو رسم الخط میں لکھا۔ دی وائر سے بات کرتے ہوئے انہوں نے کہا، میں نے اس مہم کو اس انداز میں دیکھا کہ لوگ ان  ہندوتوا’ٹرالز ‘کے خلاف آواز اٹھا رہے ہیں جو اقلیتوں کو ان کا نام دیکھتے ہی ٹارگیٹ کرتے ہیں۔سوزین مستقل اقلیتوں پر ہونے والے حملوں اور تشدد کے بارے میں لکھتی، ٹوئٹ کرتی رہی ہیں اور اس کی وجہ سے انہیں  لگاتار ٹوئٹر پر ٹرولز کا سامنا کرنا پڑتاہے۔ہندوستان میں غیر اردوداں طبقے نے جس طرح اپنے نام اردو رسم الخط میں لکھنا شروع کئے، اس سے ہر طرف اردو ہی نظر آنے لگی، اس کا اثر بیرون ملک بھی پڑا۔چوں کہ ٹوئٹر پہ ہر پیغام کے ساتھ صارف کا نام بھی نظر آتا ہے، ٹائم لائن پر اردو  کی بہار آ گئی۔

دریں اثنا پاکستان میں سوشل میڈیا پر اس کی بڑی پذیرائی ہوئی اور وہاں سے  دیوناگری میں نام  لکھوانے کے لئے لوگ ہندوستانی دوستوں کو پیغام بھیجنے لگے۔ یہ ایک خیر سگالی کا جذبہ تھا، جس سے ٹوئٹر سرابور نظر آیا۔

 بے شک یہ خوشی کی بات ہے کہ لوگ نفرت کے خلاف کھڑے ہونے کو تیار ہیں اور وہ سمجھ رہے ہیں کہ کس طرح کسی کی مذہبی پہچان تعصب کے نشانے پر ہے-اس مہم سے یہ اندازہ   ہوتا ہے کہ بہت سے لوگ عملی طور پر اسٹینڈ لینے کے لئے تیارہوتے ہیں-مگر یہ بھی سچ ہے کہ سماج میں مذہبی منافرت اور تعصبات کی جڑیں بہت گہری ہیں۔سوزین کہتی ہیں کہ یہ بات سب کو جاننا چاہئے  کہ کسی  مذہب یا ذات میں پیدا ہونے کی بنیاد پر ہم میں سے بہت سے لوگوں کو  معاشرے میں خصوصی رعایات اور اختیارات حاصل ہو جاتے ہیں اور اس کو ہمیں اچھی طرح سمجھنا چاہئے کہ دوسروں کے حقوق کےلئے بولنا،  ان کے ساتھ کھڑا ہونا ضروری ہے۔

ڈاکٹر جوناتھن نے ایک اپنے ایک ٹوئٹر تھریڈمیں یہ سمجھایا کہ کیسے کسی بھی مسئلے پر بحث کے دوران پیش کئے جا رہے  حقائق  کے بجائے لوگ فرد کے نام پر دھیان دیتے ہیں اور رائے قائم کر لیتے ہیں، اس بنیاد پر عیسائی یا مسلمان پر نفرت آمیز جملوں اور گالیوں کی بوچھار شروع ہو جاتی ہے۔ ان کا کہنا ہے کہ یہ اقلیتی تجربہ ہے جس کو اکثریت کو سمجھنے کی ضرورت ہے-جب تک آپکا نام زینب یا جوناتھن نہیں ہوگا، آپ  کو یہ نہیں جھیلنا پڑیگا۔

اسی مہم کے دوران لوگوں نے اپنا تجربات بیان کئے کہ کس طرح دفاتر، ہاسپٹل یا  کلاس روم میں اپنا نام بتانے کے بعد لوگوں کو کس طرح یہ محسوس کرایا گیا کہ وہ غیر ہیں۔ ظاہر ہے کہ ‘مائی نیم ان اردو’ایک علامتی مہم  ہے، ان لوگوں کے خلاف جو انسان کی مذہبی اور لسانی شناخت کی بنا پر لوگوں سے تعصب کا رویہ اختیار کرتے ہیں۔  اس سے یہ ثابت ہوتا ہے کہ صحیح طریقے سے آواز اٹھائی جائے تو ہزاروں لوگ ساتھ آ سکتے ہیں اور کارواں بن سکتا ہے۔

 اس رجحان سے اردو کے تئیں لوگوں کی دلچسپی کا بھی اندازہ ہوتا ہے ساتھ ہی یہ بھی کہ اچھے لوگوں کی تعداد کم نہیں ہے۔اب یہ  ضروری ہے کہ علامتی جد و جہد سے آگے بڑھ کر، عملی زندگی میں ایسا ماحول بنے کہ نفرت اور تعصب کا رویہ اختیار کرنے والے  کمزور ہوں  اور جو لوگ ایسا رویہ اختیار کرتے ہیں ان کو معاشرے میں پسپائی  اور  شرمندگی کا احساس ہو۔

Prayer Timings

Fajr فجر
Dhuhr الظهر
Asr عصر
Maghrib مغرب
Isha عشا