شہریت ترمیم بل لوک سبھا میں منظور ، آسام میں کی جا رہی ہے سخت مخالفت

share with us

 

دہلی: 08؍جنوری2019) (فکروخبر/ذرائع) آسام شہریت بل ۲۰۱۶ آج لوک سبھا میں پاس کر لیا گیا ہے بی جے پی کے ذریعہ لوک سبھا میں این آر سی بل کے خلاف نورتھ ایسٹ کی پارٹیوں سمیت خود بی جے پی کی حامی پارٹیوں نے بھی مخالفت کی تھی یہاں تک کہ کانگریس ترنمول کانگریس کے اراکین نے بھی احتجاجا واک آؤٹ کر دیا تھا کانگریس اور ترنمول کانگریس نے اس بل کو دوبارہ سلیکٹ کمیٹی کو بھیجے جانے کا مطالبہ کیا اور موجودہ شکل میں اسے لائے جانے پر ایوان سے بائیکاٹ کیا۔

لوک سبھا میں وزیر داخلہ راج ناتھ سنگھ نے اس سے پہلے شمال مشرق کی اپوزیشن ارکان کی نعرے بازی کے درمیان بل بحث کے لئے پیش کرتے ہوئے کہا کہ یہ بل لاگو کرنے کی ذمہ داری صرف آسام پر نہیں، بلکہ پورے ملک کی ہوگی اور یہ ملک بھر میں یکساں طور پر لاگو ہوگا۔ انہوں نے کہا کہ آسام کا بوجھ پورے ملک کا بوجھ ہوگا۔ اس سے آسام کے غیر قانونی تارکین وطنوں کے مسئلہ کو حل ہوگا۔

مسٹر راج ناتھ نے الزام لگایا کہ بل کے بارے میں غلط فہمی پھیلانے کے لئے کوششیں کی جا رہی ہے ۔ حکومت آسام میں قومی شہری رجسٹر کا عمل کو پورا کرنے کے لئے پرعزم ہے۔ آخری اشاعت کے بعد جو لوگ رجسٹرڈ میں درج نہیں ہوں گے ان کے لئے عدالت میں جانے کا راستہ کھلا ہے۔ اس میں آسامی شہریوں کی ثقافتی، لسانی اور سماجی شناخت کی حفاظت کے لئے کافی اقدامات کئے گئے ہیں۔
وزیر داخلہ نے کہا کہ چھ کمیونٹی کوقبائلی کی حیثیت دی جائے گی۔ اس کے علاوہ بوڈو کمیونٹی کے زیر التواء مطالبات کو بھی پورا کرنے کے ساتھ بوڈو، كاربي اور كچاري کو قبائلی کا درجہ دیا جائے گا۔ بوڈو میوزیم تعمیر کی جائے گی ۔ کوکراجھار میں دوردرشن اور ریڈیو مراکز کو اپ گریڈ کیا جائے گا اور ارونائي ایکسپریس ٹرین بھی چلائی جائے گی۔

لیکن کانگریس کے رہنما ملکا رجن کھڑگے نے بل تقسیم کرنے والا قرار دیتے ہوئے اسے مشترکہ پارلیمانی کمیٹی کے پاس وسیع مطالعہ کے لئے اسے دوبارہ بھیجنے کا مطالبہ کیا اور ہاؤس سے باہر نکل گیا۔ بعد میں حزب اختلاف کی طرف سے ترنمول کانگریس کے سوگت رائے نے بھی دس منٹ تک اپنی کہنے کے بعد بائیکاٹ کیا۔

پروفیسر رائے نے کہا کہ یہ بل آسام اور بنگال سمیت کئی ملکوں میں عدم اطمینان کا باعث بن جائے گا۔ انہوں نے کہا کہ اتنا خطرناک تقسیم کرنے والا بل آزادی کے بعد سے70 سال میں کبھی نہیں آیا۔ انہوں نے کہا کہ اس بل کے بارے میں غور کرنے کے لئے مقرر کردہ سلیکٹ کمیٹی میں نمبروں کی بنیاد پر ووٹ کے ذریعے حکمراں پارٹی نے منمانے طریقے سے منظور کرالیا ۔انہوں نے کہا نیپال، سری لنکا، میانمارکو شامل نہ کرنے کا حوالہ دیتے ہوئے مطالبہ کیا کہ اس بل سے بنگلہ دیش کانام خارج کردیا جائے۔

انہوں نے الزام لگایا ہے کہ آسام کے قومی شہری رجسٹر سے 40 لاکھ افراد کا نام باہر ہورہا ہے، جن میں سے 28 لاکھ ہندو ہیں جنہیں ایڈجسٹ کرنے کے لۓ یہ بل لایا جا رہا ہے۔ انہوں نے کہا کہ یہ آسام میں بنگالیوں پر ظلم میں اضافہ ہوگا ۔ انہوں نے کہا کہ ووٹ بینک کی سیاست کا یہ سب سے بدترین مثال ہے۔ اس کے بعد انہوں نے ہاؤس کے بائیکاٹ کا اعلان کیا۔

کمیٹی کے سربراہ رہنے والے بھارتیہ جنتا پارٹی (بی جے پی) کے راجندر اگروال نے کہا کہ سلیکٹ کمیٹی نے تمام ترمیم پر اتفاق رائے کرنے کی کوشش کی تھی اور تین ترمیموں کو اتفاق رائے سے منظور کیا ہے۔ کچھ ترمیموں پر ووٹنگ کرانی پڑی۔

حکمراں پارٹی کی طرف سے بی جے پی کے ایس ایس اہلوالیا نے بنگالی زبان میں اپنا موقف پیش کیا ۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان اور بنگلہ دیش کا قیام مذہبی انتہا خیالات کی وجہ سے ہو اتھا ۔ لہذا مذہبی اقلیتوں پر وہاں ظلم ہوتے ہیں ۔ پاکستان میں 1947 میں 23 فیصد اقلیت تھی، جو آج تین فیصد رہ گئی ہے جبکہ بنگلہ دیش میں یہ تعداد 29 فیصد سے کم ہوکر 8.5 فیصد۔ انہوں نے کانگریس اور ترنمول کانگریس پر الزام لگایا ہے کہ وہ ملک میں غلط فہمی پھیلانے کی کوشش کر رہے ہیں۔

بیجو جنتا دل (بی جے ڈی) کے بھرت ہری مہتاب نے کہا کہ اس بل سے ملک کی حکومت فالٹ لائن کھل جائیں گی ۔ انہوں نے کہا کہ یہ سچ ہے کہ مسلمانوں اور عیسائیوں کو مذہبی تشدد کے سامنا کرنے پر کئی متبادل ہیں لیکن ہندوؤں، جینوں اور بودھوں کے پاس کوئی متبادل نہیں ہے۔ انہوں نے کہا کہ سری لنکا اور میانمار کا نام شامل نہیں کیا گیا ہے تو بنگلہ دیش کا نام بھی خارج کردیا جائے۔ انہوں نے کہا کہ شہریت پر اختلافات کو بڑھانے کا کام نہیں کیا جانا چاہئے۔ انہوں نے خبردار کیا کہ ملک کی تقسیم مذہبی بنیاد پر ہوا تھا کہیں پھر دوبار ویسانہ ہو۔

 

اخیال رہے کہ شہریت بل ۲۰۱۶ در اصل بی جے پی کی دہری پالیسی کا ثبوت ہےاس بل میں شہریت قانون ۱۹۵۵ میں ترمیم کرکے پاکستان ، بنگلہ دیش ، اور افغانستان سے آکر غیر قانونی طور پر ملک میں رہ رہے ہندو سکھ بودھ جین پارسی اور عیسائی فرقہ کے لوگوں کو شہریت کے قابل ماننے کا انتظام کیا گیا ہے یعنی ان مملاک کے صرف مسلم باشندوں کو ہندوستانی شہریت نہیں ملے گی خیا ل رہے کہ آج مودی حکومت کے ذریعہ شہریت ترمیمی بل 2016 پارلیمنٹ میں پیش کیے جانے کے خلاف ترنمول کانگریس کے اراکین پارلیمنٹ نے آج پارلیمنٹ احاطہ میں انوکھے طرز پر احتجاجی مظاہرہ بھی کیا تھا

Prayer Timings

Fajr فجر
Dhuhr الظهر
Asr عصر
Maghrib مغرب
Isha عشا