ادلب میں فوجی کارروائی، شام اور ایران نے فوج جمع کرنا شروع کر دی

share with us

ایرانی ملیشیا کے 4 ہزار جنگجو حلب کی سر حدپر پہنچا دیئے گئے،ترکی نے بھی شامی اپوزیشن کو اسلحہ کی سپلائی بڑھا دی


دمشق:13؍ستمبر2018(فکروخبر/ذرائع)شام میں اپوزیشن کے آخری گڑھ ادلب میں اپوزیشن فورسزکے خلاف اسد رجیم، اس کے حلیف ایران اور روس نے فوجی قوت اور اسلحہ شہر کی سرحد پر جمع کرنا شروع کردیا ہے۔’العربیہ‘ ٹی وی چینل کی رپورٹ کے مطابق ایرانی ملیشیا کے 4 ہزار جنگجو اور ادلب میں شمالی شہر حلب کی سر حدپر پہنچا دیئے گئے ہیں۔ دوسری جانب شامی اپوزیشن نے بھی اسد رجیم اور ایرانی جارحیت کا مقابلہ کرنے کے لیے طاقت جمع کردی ہے۔ادھرترکی نے بھی شامی اپوزیشن کو اسلحہ کی سپلائی بڑھا دی ہے تاکہ کسی بھی حملے کی شکل میں اسد رجیم اور ایرانی ملیشیا کا مقابلہ کیا جاسکے۔ترکی کی فوج نے شام کی جیش الحر سے کہا ہے کہ وہ اسے موجودہ فوجی صورت حال کے پیش نظر تفصیلی رپورٹ پیش کرے تاکہ یہ اندازہ ہو کہ اپوزیشن کو کس قدر اسلحہ اور جنگجو درکار ہیں۔ترکی کے ذرائع ابلاغ نے خبر دی ہے کہ ترکی کی عسکری قیادت نے جیش الحر سے کہا ہے کہ وہ ادلب میں اسد رجیم کے خلاف جنگ کی اپنی تیاریوں کے بارے میں مطلع کرے۔ادلب میں جنگی تیاریوں کے لیے ترک نیشنل آرمی کے 50 ہزار اہلکار فرات کی ڈھال’ اور ’زیتون کی شاخ‘ آپریشنل محاذوں میں تقسیم ہیں جن میں سے 10 ہزار شام اور ترکی کی سرحد پر موجود ہیں۔ ترکی کی نیشنل آرمی کے 30 ہزار اہلکاروں کو ادلب بھیجا جائے گا۔
 

Prayer Timings

Fajr فجر
Dhuhr الظهر
Asr عصر
Maghrib مغرب
Isha عشا