افغانستان میں درجنوں ہلاکتیں، تازہ نشانہ کابل کی ایک وزارت

share with us

کابل:11؍جون2018(فکروخبر/ذرائع)افغانستان میں آج پیر کے روز طالبان کی طرف سے ملک کے مختلف حصوں میں حملے کیے گئے ہیں۔ تازہ حملہ کابل میں ایک افغان وزارت کے باہر اُس وقت ہوا جب ملازمین چھٹی کے بعد گھروں کو جا رہے تھے۔جرمن خبر رساں ادارے ڈی پی اے کے مطابق یہ ایک خودکش حملہ تھا جس کے نتیجے میں کم از کم 15 افراد زخمی ہوئے۔ افغان پبلک ہیلتھ منسٹری کے ایک ترجمان واحد اللہ مجروح کے مطابق اس حملے میں کم از کم 12 افراد ہلاک جبکہ 31 دیگر زخمی ہوئے ہیں۔ کابل پولیس کے ترجمان حشمت اللہ ستانکزئی کے مطابق یہ حملہ افغان وزارت دیہی بحالی اور ترقی کے مغربی گیٹ کے باہر ہوا۔افغانستان کی تولو نیوز ایجنسی نے پولیس ذرائع کے حوالے سے بتایا ہے کہ اس حملے میں کم از کم پانچ افراد ہلاک ہوئے ہیں جبکہ 20 دیگر زخمی ہیں۔قبل ازیں آج پیر 11 جون کو ہی افغان صوبے قندوز میں طالبان کے ایک حملے کے نتیجے میں پندرہ سکیورٹی اہلکار مارے گئے۔ حکام نے بتایا ہے کہ پیر کی صبح حملہ آوروں نے ایک سکیورٹی چیک پوائنٹ پر اچانک حملہ کر دیا، جس کے بعد طالبان جنگجوؤں اور سکیورٹی فورسز کے مابین فائرنگ کا تبادلہ شروع ہو گیا۔ اس کارروائی کی وجہ سے دس افغان فوجی اور پانچ پولیس اہلکار لقمہ اجل بن گئے۔ویک اینڈ کے دوران طالبان کی ایسی ہی کارروائیوں کی وجہ سے افغانستان بھر میں اٹھائیس سکیورٹی اہلکار مارے گئے۔  یہ کارروائیاں ایک ایسے وقت میں ہوئی ہیں، جب عید کے موقع پر طالبان اور افغان حکومت کی طرف سے جنگ بندی کی اعلانات کیے گئے ہیں۔ادھر افغانستان کے مشرقی حصے میں آج پیر ہی کے روز ایک منی بس سڑک کنارے نصب ایک بم کا نشانہ بنی جس کی وجہ سے اس میں سوار چھ افراد مارے گئے۔ افغان صوبہ غزنی کے گورنر کے ترجمان عارف نوری کے مطابق ہلاک ہونے والوں میں خواتین اور بچے بھی شامل ہیں۔ نوری کے مطابق یہ بم طالبان کی طرف سے نصب کیا گیا تھا۔ نوری کے مطابق صوبہ غزنی کے ایک اور علاقے میں طالبان کے ایک حملے میں تین پولیس اہلکار جبکہ 10 حملہ آور طالبان ہلاک ہوئے۔

Prayer Timings

Fajr فجر
Dhuhr الظهر
Asr عصر
Maghrib مغرب
Isha عشا